14

ترین اور قریشی تنازعے کے بعد ایک اور بڑا جگھڑا: آج کابینہ اجلاس میں دو وفاقی وزراء میں زبردست لڑائی ہوگئی ۔۔۔ حالات کپتان کے کنٹرول سے باہر



اسلام آباد(ویب ڈیسک) وفاقی کابینہ کے اجلاس میں وزیر پٹرولیم غلام سرور اور وزیر ریلویز شیخ رشید احمد میں نوک جھونک ہوئی ہے، ذرائعکے مطابق شیخ رشید نے اجلاس میں شکوہ کیا کہ ای سی سی نے منظوری دی تھی کہ وزارت پٹرولیم کا ذیلی ادارہ (پی ایس او) ملک بھر میں آئل

کی ٹرانسپورٹیشن پاکستان ریلویز کے ذریعے کرے گا تاکہ آئے روز شاہراہوں پر آئل ٹینکروں کے حادثات سے بچا جائے، ریلوے کم وقت میں زیادہ مقدار میں آئل ملک کے ایک کونے سے دوسرے کونے تک منتقل کرسکتا ہے، واضح رہے کہ وفاقی کابینہ کے اجلاس میں وزیر پٹرولیم غلام سرور اور وزیر ریلویز شیخ رشید احمد میں نوک جھونک ہوئی ہے، یاد رہے کہ اس سے قبل یہ بھی خبر تھی کہ وزیراعظم عمران خان نے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی اور جہانگیر ترین کے تنازع میں کابینہ ارکان کو بیان بازی سے روک دیا۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ پارٹی کے اندرونی اختلافات کا اظہار میڈیا پر کرنا نامناسب ہے، پوری پارٹی ملکی چیلنجز کا مقابلہ کرنے کے لیے اتحاد کا مظاہرہ کرے۔وزیراعظم کا کہنا تھا کہ زراعت پالیسی پر خود جہانگیر ترین کو اسائنمنٹ دی تھی، عدالتی فیصلوں کا احترام کرتے ہیں تاہم جہانگیر ترین سے بطور ایکسپرٹ بریفنگ لی۔شاہ محمود اور جہانگیر ترین ایک مرتبہ پھر آمنے سامنے آگئےسرکاری اجلاسوں میں شرکت سے متعلق شاہ محمود قریشی کی بات پر جہانگیر ترین نے ٹوئٹر پر جواب دیا، ذرائع کے مطابق وزیراعظم نے کہا کہ اجلاس میں کون آئے گا اور کون نہیں، یہ فیصلہ کرنا بطور وزیراعظم میری صوابدید ہے۔وزیراعظم نے مزید کہا کہ شاہ محمود قریشی اور جہانگیر ترین سینیئر رہنما ہیں اور دونوں کی رائے اہم سمجھی جاتی ہے۔ اور اب یہ خبر سامنے آئی ہے کہ وفاقی کابینہ کے اجلاس میں وزیر پٹرولیم غلام سرور اور وزیر ریلویز شیخ رشید احمد میں نوک جھونک ہوئی ہے۔



Source link