26

یہ تو حال ہے امریکی معاشرے کا ۔۔۔۔۔ بیوی سے طلاق ملنے کے بعد والدین کے ساتھ رہنے والے ایک جنسی درندے نے سگے ماں باپ پر کیا شرمناک الزام لگا دیا ؟ جان کر آپ یقین نہیں کریں گے



واشنگٹن (ویب ڈیسک) امریکی ریاست مشیگن کی ایک عدالت میں ان دنوں ایک غیر معمولی مقدمہ چل رہا ہے۔ ایک چالیس سالہ شخص نے اپنے والدین کے خلاف بطور ہرجانہ ستاسی ہزار ڈالر کا مقدمہ دائر کر رکھا ہے۔ والدین نے اس شخص کا جمع کردہ جنسی مواد پھینک دیا تھا۔

میڈیا کے مطابق اس شخص نے دعویٰ کیا ہے کہ اس کے ضائع کیے گئے مواد کی کم سے کم قیمت بھی انتیس ہزار ڈالر بنتی ہے۔ سن دو ہزار سولہ میں اس شخص کی طلاق ہو گئی تھی، جس کے بعد اس نے دوبارہ اپنے والدین کے گھر رہنا شروع کر دیا تھا۔ یہ شخص دس ماہ تک اپنے والدین کے ساتھ رہا اور پھر اپنی ذاتی رہائش گاہ میں منتقل ہو گیا۔ اس دوران اس کے والدین نے بھی سامان منتقل کرنے میں اس کی مدد کی۔کچھ ہی دنوں بعد اس شخص کو پتا چلا کہ اس کا ’ذاتی جمع کردہ جنسی مواد‘ تو وہاں موجود ہی نہیں ہے۔ اس نے اپنے والدین سے اس حوالے سے پوچھا تو انہوں نے ای میل پر جواب دیتے ہوئے تصدیق کی کہ فحش فلموں اور ’جنسی آلات‘ سے بھرے دو ڈبے انہوں نے ضائع کر دیے ہیں۔ میڈیا رپورٹوں کے مطابق اس کے بعد بیٹے نے پولیس سے رابطہ کیا لیکن پولیس نے اس معاملے میں شامل ہونے سے انکار کر دیا۔ بیٹے نے والدین پر الزام عائد کرتے ہوئے کہا ہے،’’انہوں نے یہ سب کچھ بدلہ لینے کے لیے کیا۔ اگر انہیں میری اشیاء سے کوئی مسئلہ تھا تو مجھے بتا دیتے، میں ان کے گھر سے پہلے ہی چلا جاتا۔‘‘ اس کے جواب میں والدین نے کہا ہے کہ انہوں نے یہ سب کچھ اپنے بیٹے کی صحت کو مدنظر رکھتے ہوئے کیا ہے۔ ماضی میں بھی ان کا بیٹا اسکول میں اپنے ساتھیوں کو اس طرح کی جنسی فلمیں فروخت کرتا رہا ہے۔ والد کا کہنا تھا، ’’اگر مجھے ایک کلو گرام ہیروئن بھی ملتی تو میں اس کے ساتھ بھی ایسا ہی کرتا۔‘‘ والد کا اُمید ظاہر کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ایک دن ضرور آئے گا، جب ان کا بیٹا اس بات کو سمجھ سکے گا۔ بیٹے نے دعویٰ کیا ہے کہ اس کی ملکیتی وہ فحش فلمیں بھی ضائع کر دی گئی ہیں، جن کو بنانے والے اسٹوڈیوز بھی بیس برس قبل بند ہو چکے ہیں۔(ش س م)





Source link