13

بلاول بھٹو کے بعد آصف زرداری کی نواز شریف سے ملاقات کی خبر ۔۔۔۔ جلد ملکی سیاست میں کیا اپ سیٹ ہونے والا ہے ؟ بریکنگ نیوز آ گئی


اسلام آباد (ویب ڈیسک ) پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری اور پاکستان مسلم لیگ(ن) کے قائد محمد نواز شریف کی کوٹ لکھپت جیل میں ہونے والی ملاقات کے ملکی سیاست پر گہرے اثرات مرتب ہوں گے بلاول بھٹو زرداری نے میاں نواز شریف آصف علی زرداری کا پیغام اور نیک خواہشات پہنچائیں

معروف صحافی محمد نواز رضا اپنی ایک رپورٹ میں لکھتے ہیں۔۔۔ ۔ میاں نواز شریف اور آصف علی زرداری ’’میثاق جمہوریت‘‘ کو آگے لے کر چلیں گے بظاہر یہ ملاقات غیر سیاسی نوعیت کی تھی لیکن ملاقات کے دوران موجود پیپلز پارٹی کے ایک رہنما نے بتایا کہ اس ملاقات کے بعد میاں نواز شریف اور آصف علی زرداری کے درمیان’’گرمجوشی ‘‘ بڑھے گی۔ دونوں جماعتوں کی اعلیٰ قیادت مستقبل قریب میں سیاسی منظر کی تبدیلی میں اہم کردار ادا کرے گی ۔ گزشتہ 6ماہ کے دوران تمام تر کوششوں کے باوجود نواز شریف ،آصف علی زرداری اور بلاول بھٹو زرداری کے درمیان ون آن ون ملاقات نہیں ہوسکی لیکن پاکستان پیپلز پارٹی کی اعلیٰ قیادت نے بلاول بھٹو زرداری کو میاں نواز شریفکی عیادت کے لیے بھیج کر حکومت کو یہ پیغام دیا کہ اگر سیاسی قیادت کو دیوار سے لگانے کی پالیسی ترک نہ کی گئی تو اپوزیشن کی تمام جماعتوں کو سڑکوں پر لانے کی حکمت عملی اختیار کی جائے گی ۔ بلاول بھٹو زرداری کی میاں شہباز شریف سے بھی ملاقات متوقع ہے۔ پاکستان پیپلز پارٹی نے میاں نواز شریف کے علاج کے معاملہ پر کھل کر حمایت کاعندیا دیا ہے۔ پیپلز پارٹی کے طرز عمل سے دونوں جماعتوں کے درمیان فاصلے کم ہوگئے ہیں اگر آنے والے دنوں میں میاں نواز شریف اور آصف علی زرداری کو کوئی ریلیف نہ ملا تو پارلیمنٹ کے باہر نئی صف بندی ہوسکتی ہے۔ پیپلز پارٹی اور جمعیت علما اسلام (ف) پہلے ہی ایک ’’صفحہ‘‘ پر ہیں جمعیت کا رواں ماہ ’’ملین مارچ‘‘ کا پروگرام ہے جب کہ پاکستان پیپلز پارٹی موسم کی تبدیلی کی منتظر ہے۔ پیپلز پارٹی کی قیادت موجودہ حکومت کے خلاف تحریک چلانے کے لئے پاکستان مسلم لیگ(ن) کی قیادت کو‘‘آن بورڈ ‘‘ لینا چاہتی ہے جب کہ پاکستان مسلم لیگ (ن) کی اعلیٰ قیادت ضمانت کی درخواستوں پر فیصلہ کے بعد ہی آئندہ لائحہ عمل کا اعلان کرے گی ۔ آصف علی زرداری کی بھی میاں نواز شریف سے ملاقات کے امکانات ہیں۔ ذرائع کے مطابق عوامی نیشنل پارٹی بھی نواز شریف کا ساتھ دینے کا اعلان کر چکی ہے آنے والے دنوں میں محمود خان اچکزئی ،میر حاصل بزنجو اور اپوزیشن کی دیگر جماعتوں کے رہنما حکومت پر دبائو بڑھانے کے لئے ایک ’’کشتی‘‘ پر سوار ہوجائیں گے ۔ اپوزیشن کی جانب سے ہر سطح پر حکومت کو جواب دینے کے لئے لائحہ عمل تیار کیا جائے گا۔





Source link