29

بریکنگ نیوز :مشال قتل کیس کا ناقابل یقین فیصلہ ۔۔۔انسداد دہشتگردی عدالت پشاور سے تازہ ترین خبر


پشاور(ویب ڈیسک ) پشاور کی انسداد دہشتگردی عدالت نےمشال خان قتل کیس کا فیصلہ محفوظ کرلیاہے۔ دونوں فریقین کے وکلاء نے اپنے دلائل مکمل کرلئےہیں۔ انسداد دہشتگردی عدالت 46 گواہان اور مشال کے والد کا بیان پہلے ہی ریکارڈ کرچکی ہے۔ عدالت نے مختصر حکم میں کہا کہ کیس کا فیصلہ 16 مارچ کو سنایا

جائے گا۔ یاد رہے کہ پشاور کی انسداد دہشت گردی عدالت مشال خان قتل کیس کے دو ملزمان کی درخواست ضمانت خارج جب کہ ایک کی کالعدم قرار دے چکی ہے، ان میں مرکزی ملزم اسد بھی شامل ہے۔ دیگر ملزمان میں شامل صابر مایار، اظہاراللہ عرف جونی اوراسد نے کیس کا فیصلہ سامنے آنے پر خود گرفتاری دی تھی۔ انسداد دہشت گردی عدالت کی جانب سے مشال خان کیس میں ایک ملزم کو سزائے موت اور چار کو عمر قید کی سزا سنائی جا چکی ہے۔ اس سے قبل گزشتہ برس فروری کے آخر میں عدالت نےمشال خان قتل کیس میں 25 ملزمان کی سزائیں معطل کردی تھیں۔ پشاور ہائی کورٹ ایبٹ آباد بینچ میں کیس سے متعلق سزاؤں کے خلاف اپیل کی سماعت ہوئی تھی جس کے بعد یہ فیصلہ دیا گیا تھا۔ انسداد دہشت گردی عدالت ایبٹ آباد نے مشال خان قتل کیس میں 25 ملزمان کو چار چار سال قید کی سزائیں دی تھیں تاہم ملزمان نے اپنی سزاؤں کو ہائی کورٹ میں چیلنج کررکھا تھا۔ یاد رہے کہ سپریم کورٹ بھی مردان میں عبدالولی خان یونیورسٹی کے طالبعلم مشال خان کے قتل پر لیے گئے ازخود نوٹس کیس کو نمٹا چکی ہے۔ سپریم کورٹ کے مطابق ملزم کو ٹرائل کورٹ سے سزا ہوچکی ہے، جس کے بعد ازخود نوٹس کو مزید چلانے کی ضرورت نہیں ہے۔ ایڈیشنل ایڈوکیٹ جنرل نے مؤقف اختیار کیا تھاکہ صوبائی حکومت نے بری ہونے والے ملزمان کے خلاف اپیل دائر کررکھی ہے۔ عبدالولی خان یونیورسٹی مردان میں توہین رسالت کے الزام میں قتل ہونے والے مشال خان کے واقعے پر سپریم کورٹ نے ازخود نوٹس لیا تھا۔ مشال کے قتل کا واقعہ 13 اپریل 2017 کو عبدالولی خان یونیورسٹی مردان کیمپس میں پیش آیا تھا۔ طلبا نے توہین عدالت کا الزام لگا کرصوابی کے رہائشی، ماس کمیونیکیشن کے طالبعلم مشال خان کو بدترین تشدد اور فائرنگ کرکے قتل کردیا تھا۔ مشال قتل کیس میں نامزد 60 میں سے 57 ملزمان کو پولیس نے حراست میں لیا تھا۔ جن کے خلاف مشال خان کے قتل کا مقدمہ انسداد دہشت گردی کی عدالت نے ہری پور جیل میں چلایا تھا۔ انسداد دہشت گردی کی عدالت نے رواں سال سات فروری کو ملزمان کے خلاف فیصلہ سنایا تھا۔ عدالت نے مشال خان کے قتل میں ملوث گرفتار 57 طلبا میں سے 31 کو سزا سنائی اور 26 کو بری کردیا گیا جب کہ تین ملزمان کو مفرور قرار دیا گیا تھا۔ ملزمان میں شامل مرکزی ملزم عمران علی کو سزائے موت سنائی گئی، پانچ ملزمان کو 25 سال قید جب کہ 25 ملزمان کو چار سال قید اور جرمانے کی سزا سنائی جاچکی ہے۔ مشال خان کی والد کی درخواست پر پشاور ہائی کورٹ نے مقدمہ ایبٹ آباد میں انسداد دہشت گردی کی عدالت منتقل کرنے کا حکم دیا تھا۔ جس کے بعد انسداد دہشت گردی عدالت نے مقدمے کی سماعت ہری پور جیل میں کی تھی۔





Source link