11

میاں نواز شریف کی ای سی ایل سے نام ہٹانے کی اپیل پر فیصلہ کون کرے گا ؟ حیران کن خبر آگئی – Hassan Nisar Official Urdu News Website


لاہور (ویب ڈیسک) وزارت داخلہ نے سابق وزیر اعظم نواز شریف کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) سے نکالنے کے لیے معاملہ قومی احتاسب بیورو کے سپرد کر دیا ہے۔ نیب کے ترجمان نے بھی تصدیق کردی ہے کہ وزارت داخلہ کی طرف سے خط نیب کو مل گیا ہے۔نمائندہ بی بی سی شہزاد ملک کے مطابق


نیب نے وزارت داخلہ کے حکام کی طرف سے درخواست موصول ہونے کی تصدیق کی ہے۔ یہ درخواست پاکستان مسلم لیگ نواز کے صدر اور پنجاب کے سابق وزیر اعلیٰ شہباز شریف کی طرف سے دی گئی ہے۔وزارت داخلہ کے حکام کے مطابق اس درخواست میں میاں نواز شریف کی خرابی صحت کے بارے میں تشویش کا اظہار کرتے ہوئے ممکنہ طور پر بیرون ملک علاج کروانے کا ذکر کیا گیا ہے اور اسی بنا پر ان کا نام ای سی ایل سے نکالنے کی درخواست کی گئی ہے۔واضح رہے کہ وزیر اعظم عمران خان نے بحیثیت وزیرِ داخلہ میاں نواز شریف کا نام ای سی ایل میں شامل کیا تھا۔دوسری جانب پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے اپنے والد اور پاکستان کے سابق وزیرِ اعظم نواز شریف کی صحت پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ انھیں علاج کے لیے ملک سے باہر چلے جانا چاہیے۔جمعہ کو لاہور میں عدالت میں پیشی کے موقع پر جب مریم نواز سے یہ سوال کیا گیا کہ کیا نواز شریف ملک سے باہر جا رہے ہیں تو ان کا کہنا تھا کہ نواز شریف کی صحت خراب ہے اور انھیں علاج کے لیے بیرون ملک جانا چاہیے۔ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ نواز شریف کی صحت کے معاملے پر کوئی سمجھوتا نہیں کیا جا سکتا۔اس سوال پر کہ کیا نواز شریف بیرون ملک جانے کے لیے مان گئے ہیں مریم نواز کا کہنا تھا کہ ’یہ الگ بحث ہے۔‘مسلم لیگ ن کی نائب صدر جمعے کو چوہدری شوگر ملز کیس میں عدالت میں پیش ہوئیں اور ان کا کہنا تھا کہ


’آج بھی نواز شریف صاحب کی طبیعت بہت خراب ہے اس کے باوجود عدالت میں حاضر ہوئی ہوں۔‘مریم نواز کا کہنا تھا کہ ان کے والد کا پلیٹلیٹس روزانہ کی بنیاد پر اتار چڑھاؤ کا شکار ہیں۔ ’نواز شریف کے پلیٹلیٹس 20 ہزار تک آ گئے ہیں۔ ملک میں پلیٹلیٹس میں اضافے کے لیے جو بھی علاج دستیاب تھا وہ کروا لیا ہے، لیکن یہ علاج کام نہیں کر رہا اور ان کی بیماری کی وجہ پتا نہیں چل رہی۔‘صحافی عباد الحق کے مطابق ایک سوال کے جواب میں مریم نواز نے کہا کہ ’ڈیل کی باتیں کرنے والوں شرم آنی چاہیے۔‘ان کا کہنا تھا کہ وہ بیرون ملک سفر نہیں کر سکتیں کیونکہ ان کا پاسپورٹ عدالت میں جمع ہے۔ ’میری خواہش ہو گی۔۔۔ یہ بہت مشکل ہو جائے گا کہ میاں صاحب علاج کے لیے باہر چلے جائیں اور میں نہ جا سکوں کیونکہ مجھے ان کی بہت فکر ہوتی ہے۔ لیکن دنیا کے جس کونے میں بھی علاج میسر ہو میاں صاحب کو وہاں جانا چاہیے۔‘جب ان سے سوال ہوا کہ کیا نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالے جانے کے حوالے سے شریف خاندان نے کوئی درخواست دی ہے تو مریم نواز کا کہنا تھا کہ ’اس بارے میں مجھے کوئی معلومات نہیں ہیں۔ میں گھر جا کر شہباز شریف سے پوچھوں گی کیونکہ ان معاملات کو وہ دیکھ رہے ہیں۔‘یاد رہے کہ مریم نواز کو چوہدری شوگر ملز کیس میں لاہور ہائی کورٹ سے ضمانت پر رہائی ملنے کے بعد بدھ کی صبح رہا کر دیا گیا تھا۔مریم نواز کی رہائی کے بعد سروسز ہسپتال میں زیرِ علاج نواز شریف کو بھی جاتی امرا میں ان کی رہائش گاہ پر منتقل کر دیا گیا تھا۔(ش س م) (بشکریہ : بی بی سی )








Source link